آپکی آواز نیوز ون ڈنمارک۔۔۔ ڈینش پارلیمنٹ کے ممبر ایم این اے ملک سکندر صدیق اور کوپن ہیگن کے سٹی کونسلر سید بدر شاہ نے ادارہ آپکی آواز کے لائیو پروگرام میں کرونا وائرس ،غیرملکیوں کے بارے آنے والی تجاویز، بچوں کے متعلق اوردس سال بعد ڈنمارک میں ہر شہری کو ڈینش شہریت دی جائے،سوالوں کے جوابات دیتے ہوئے کیا کہا سُننے کے لئے تصویر پر کلک کریں ۔
ڈنمارک ۔۔تجزیہ نگار رانا اطہر پاکستان ہاﺅس کے بانی نے ادارہ آپکی آواز کے لائیو پروگرام میں کرونا وائرس،ترکی ڈرامہ جو پی ٹی وی پر نشر کیا جا رہا ہے،کشمیر کے موجودہ سیاسی حالات پر کیا کہا سننے کے لئے تصویر کلک کریں۔
تجزیہ نگار سوشل ورکر مسلم لیگ ن کے جیالے شاکر قریشی نے برطانیہ سے ادارہ آپکی آواز کے لائیو پروگرام میں کرونا وائرس،ترکی ڈرامہ جو پی ٹی وی پر نشر کیا جا رہا ہے،موجودہ سیاسی حالات پر کیا کہا سننے کے لئے تصویر کلک کریں۔
ڈنمارک ۔۔شاہد جنجوعہ تجزیہ نگار نے ادارہ آپکی آواز نیوزون کے لائیو پروگرام میں کرونا وائرس، جسٹس عیسی کیس پاکستان کے دگرگوں حالات شیخ الاسلام کی خاموشی ،پاکستان کے سیاسی حالات پر کیا کہا سننے کے لئے تصویر پر کلک کریں۔
ڈنمارک ۔۔پارلیمنٹ کے ممبر ملک سکندر صدیق نے ادارہ آپکی آواز نیوزون کے لائیو پروگرام میں کرونا وائرس، امریکہ ایمبیسی کے سامنے احتجاج ،ڈنمارک کے سیاسی حالات پر کیا کہا سننے کے لئے تصویر پر کلک کریں۔
مستنداداروں کی مصنوعات اورادویات کے بارے میں ہرقسم کی ضروری معلومات سے آگاہ ہونا صارف کا بنیادی حق ماناجاتا ہے اسلئے ان میں استعمال ہونیوالی مختلف اشیاءکی تفصیلات پیکنگ پردرج ہوتی ہیں ۔ کوئی بھی مقابلہ دیکھنے کیلئے ٹکٹ بک کرتے وقت کون کس کے مدمقابل آئے گا اوران ٹیموں میں کون سے پلیئرز شریک ہوں گے مداحوں کو سب کچھ علم ہوتا ہے کیونکہ اس طرح کے فیصلے یقینا دلچسپی ،سنجیدگی اورپسندیدگی کی بنیادپر کئے جاتے ہیں۔زیادہ تر لوگ فلم دیکھنے کافیصلہ اس کے پروڈیوسر، ڈائریکٹر اور مرکزی کرداروں سمیت دوسری کاسٹ کودیکھتے ہوئے کرتے ہیں،اگرکاسٹ پسندیدہ نہ ہوتوفلم دیکھنے کاپروگرام ملتوی کردیاجاتاہے ۔
اوسلوآپکی آواز(عقیل قادر) 17 مئی کا دن ناروے کی تاریخ میں ایک اہم مقام رکھتا ہے اس دن ناروے کا آئین منظور کیا گیا اور اسی دن ناروے نے 1905 میں سویڈین سے آزادی حاصل کی جسے بعد ازاں ایک قومی دن کا درجہ دیا گیا۔ یوم آزادی کے موقع پر ناروے کے تمام چھوٹے بڑے شہروں میں ریلیوں کا اہتمام کیا جاتا ہے جس میں ہر عمر کے افراد بڑے جو ش و خروش سے شریک ہوتے ہیں اور اپنے وطن سے محبت کا اظہار کرتے ہیں، اوسلو میں سکولز کے ہزاروں بچے ریلیوں کی شکل میں بادشاہ کے محل کے سامنے سے گذرتے ہیںاور ناروے کے بادشاہ Kong Harald اپنی فیملی کے ہمراہ محل کی بالکونی سے ریلی کے شرکاءکو ہاتھ ہلا کر خوش آمدید کہتے ہیں اور خوشی کا اظہار کرتے ہیں۔ اس سال کرونا وائرس کی احتیاطی تدابیر کے پیش نظر ریلیوں کو منسوخ کر دیا گیا، مگر اس کے باوجود لوگوں نے اپنے اپنے علاقوں میں یوم آزادی کو جوش و خروش سے منایا۔ ریلیوں کے منسوخ ہونے کی وجہ سے لوگ بادشاہ کے محل کے سامنے نہیں جا سکے مگر ناروے کے بادشاہ نے اپنی فیملی کے ہمراہ بغیر چھت والی گاڑی میں اوسلو کے مختلف علاقوں کا دورہ کیا اور لوگوں کی خوشیوں میں شریک ہوئے۔ Kong Harald نے اس موقع پر ناروے کے سب سے بڑے ہسپتال Ullevål کا بھی وزٹ کیا جہاں پر ہسپتال کے عملے اور مریضوں نے انکا پرتپاک استقبال کیا۔ نارویجن قوم نے Kong Harald کے اس اقدام کو خوب سراہا اورخوشی کا اظہار کیا۔ ناروے کی وزیر اعظم ایرنا سولبرگ نے بھی قوم کو یوم آزادی کی مبارکباد پیش کی اور کرونا وائرس کی احتیاطی تدابیرکو یقینی بنانے پر زور دیا۔